سینٹر آف اسلام سائنس (عقل والوں کے لیے)

قادیانیت اور حضرت مہدی و عیسیٰ علیہ السلام

تحریر: محمد نوح (www.CoislamScience.com)

میں نہیں سمجھتا کہ اس مضمون کو پڑھنے کے بعد کوئی عقل و شعور رکھنے والا قادیانی اپنے مذہبی رہنمائوں کے ہاتھوں بے وقوف بنتا رہے گا۔ میں اللہ کے فضل سے بغیر کتابوں کے اس بات کو ثابت کردو ں گا کہ سچ اور جھوٹ کیا ہے۔
شروع کرتے ہیں اس بات سے کہ قادیانیوں کا اصل زورحضرت عیسیٰ علیہ السلام کے فوت ہونے کو ثابت کرنے پر اور مرزا غلام قادیانی کو حضرت عیسٰی علیہ السلام ثابت کرنے پرہے۔چونکہ اس بات کو قادیانی تسلیم کرتے ہیں کہ مرزا غلام ہی دراصل عیسی تھا پھر لازم ہوا کہ انکے لئے وہ نبی ہے۔
ایک مسلمان نے دین اسلام کے علوم و فنون حاصل کئے ، مناظرے کئے، روحانیت میں آگے گیا مگر ایک دن ابلیس نے اس پر حملہ کیا اور اسے اس طرح پچھاڑا کہ وہ بے چارہ یہ دعوی کربیٹھاکہ میں ہی حضرت مہدی اور عیسیٰ علیہ السلام ہوںاور ایک دن وہ انسان مرگیا۔ اس کے دعووں کو سچا ماننے والے کئی پیروکار تیار ہوگئے جنہوں نے اپنے ہی جیسے ایک انسان یعنی مرزا غلام احمد قادیانی کی باتوں کو سچ مان لیا اور اسکی باتوں کو بغیر سوچے سمجھے ایمان لاکر پھیلانا شروع کردیاجو آج قادیانیت /احمدیت کے نام سے مشہورہے اوراسلام کی آڑ میں جھوٹا مذہب پھیلانے میں مصروفِ عمل ہے۔
یہ کیسے ثابت ہوگا کہ حضرت عیسیٰ ہونے کا دعویدارسچا تھا یا جھوٹا؟
اللہ کسی انسان کو کچھ کہنے سے نہیں روکتا۔ وہ چاہے خدائی کا دعوی کرے،نبوت کا دعوی کرے، جادوئی کرشموں سے لوگوں کو اپنا بنا لے مگر چونکہ یہ دنیا امتحان کی جگہ ہے لہذا اسے زندگی تک مہلت دی جاتی ہے۔ اسی لئے ہمیںدنیا میں قادیانیوںکے ساتھ اللہ کا فیصلہ دیکھنا پڑے گا کہ مرنے کے بعد اسکے عقائد کی وجہ سے جسم کے ساتھ کیا ہوا۔
یہ بات قرآن و حدیث اور دنیاوی ثبو ت و شواہد سے ثابت ہے کہ انبیاء اور اللہ کی راہ میںشہید ہونے والو ں کے جسم موت کے بعدتروتازہ رہتے ہیں۔ لہذا اگر قادیانیوںکا مذہب ہی سچا اسلام ہے تو تمام قادیانیوںکی لاشیں محفوظ رہنی چاہئیں اور دنیا کے تمام غیر قادیانی مسلمانوں کی لاشوں کو حتمی طور پر سڑ گل جانا چاہئے مگر حقیقت میں اس کے بالکل برعکس ہو رہا ہے۔مرزا غلام قادیانی کی لاش ہی سڑ گل گئی اور یہ روحانی تصدیق سے ثابت ہے۔ جسے شک ہو وہ اللہ سے استخارہ کرلے یا مرزا غلام قادیانی کی قبر کشائی کروائی جائے اور دیکھ لیا جائے کہ اس کی لاش سڑگل چکی ہے۔
لہذا جب جھوٹا انسان ہی مرگیا تو وہ اپنے ماننے والوں کو کیا خاک بچائے گا۔ اس کے جانے سے لے کر آج تک اسے عیسیٰ اور مہدی ماننے والوںکا جسم بھی مرنے کے بعد سڑ گل رہا ہے۔ جو کسی بھی قادیانی کی آنکھیں کھول دینے کے لئے کافی ہے بشرطیکہ وہ سچائی کو ترجیح دیتا ہو اور اپنی کتابوں کو ایک طرف پھینک کرہر تعصب اور انا پرستی سے بالا تر ہوکر سوچے۔
اب بھی کوئی قادیانی اس حقیقت کا انکار کرے تو پھر آسان طریقہ یہ ہے کہ کسی بھی قادیانی کے مرنے کے بعد کم از کم ایک ہفتہ اسے نہ دفنایا جائے۔ لوگ دیکھ لیں گے کہ اس کی لاش سے بدبوآنا شروع ہوجائے گی اور وہ سڑنا گلنا شروع ہوجائے گی۔
یہ ایک ناقابل انکار ثبوت ہے کہ وہ جس مذہب کی تشہیر میں مصروف ہے وہ مکمل طور پر اللہ کے نزدیک ناقابل قبول اور غلط ہے۔ اللہ کے نزدیک دین صرف اسلام ہے اور صحیح عقائد والا سچا مسلمان ہی اللہ کے حکم پرمرنے کے بعد محفوظ رہتا ہے۔ اللہ نے یہ ایک ایسی قابل مشاہدہ ثبوت تیار کررکھا ہے جو ہر باطل کو اکھاڑ پھینکنے کیلئے کافی ہے۔
لہذا دنیا میں انسان جو مرضی دعوی کرلے، جتنا مرضی علوم و فنون سے لوگوں کو الجھالے، جتنا مرضی روحانی طاقتیں حاصل کرلے مگر جیسے ہی وہ انسان مرتا ہے اسکی ساری جسمانی اور روحانی طاقتیں ختم ہوجاتی ہیںاور دنیا ہی میں یہ حقیقت سامنے آجاتی ہے کہ فلاں انسان کے عقائد غلط تھے۔
اللہ کے فضل و کرم اور حضرت محمدﷺ کے فیض سے دی گئی دلیل کی روشنی کے مطابق لاشوں اور روح کے کردار پر تحقیقات و ریسرچ (قبروں کی ویڈیوز،سچے واقعات اور تفصیل کیلئے www.RightfulReligion.comویب سائٹ کو چیک کریں)کرنے کے بعدمیں سیدھی سی بات جانتا ہوںکہ اللہ حضرت محمدﷺ کے زمانے سے لے کر اب تک ہر غیر مسلم اور کافر ،جھوٹے نبیوں اور انکے جھوٹے پیروکاروں نیز فاسق و فاجر مسلمانوں کی لاشیں سڑا گلا رہا ہے اور چودہ سو سالوں سے لے کر آج تک سچے مسلمانوں کی لاشو ں کو محفوظ کر رہا ہے ۔ یہ ایک بہت بڑا اور دیکھے جانے والا ثبوت ہے جس کے بعد کسی بھی مذہب کے پیروکار کے لئے اپنے مذہبی رہنما یا جھوٹی کتابوں پر یقین کرنے کی ضرورت ختم ہوجاتی ہے۔
ساری دنیا کے مذاہب کے پیروکاروں کا یہی دعوی ہے کہ وہ سچے ہیںاور ثبوت میں اپنے مذہب کی کتابوں کے انبار لگا دیتے ہیں جو ایک حقیقت پسند کے نزدیک کوئی اہمیت نہیں رکھتے۔ سچ اور جھوٹ کا فیصلہ ایک ناقابل انکار دلیل سے ہونا چاہئے جو تمام جھوٹے مذاہب کو باطل ثابت کردے۔
میں تمام قادیانی بھائی بہن کو دعوت دیتا ہوں کہ کہ وہ جہنم سے بچنے کی فکر کریںاور اپنے مذہبی رہنمائوں کی کتابی باتوں کے جھوٹے دلائل و منطق سے باہر نکال آئیں اور قابل مشاہدہ نتائج سے سیکھیں۔
میں کچھ سوالات کے ساتھ یہ مضمون ختم کرتا ہوں ۔
اگر مرزاغلام قادیانی عیسیٰ اور مہدی تھا تواس کا جسم گل سڑ کر ختم کیوں ہوگیا ؟
اگر مرزاغلام قادیانی عیسیٰ اور مہدی تھا تو مرنے کے بعد اس کی روح شہید مسلم شاہ عقیق بابا کی طرح لاعلاج مریضوں کے علاج و آپریشن کرنے سے کیوں محروم ہے؟
کبھی تنہائی میں غور و فکر کرکے سوچئے گا۔


Home | About